پانچ آدمیوں کو نیند نہیں آتی؟

پانچ آدمی سو نہیں سکتے؟ کسی کا قتل کرنے کا ارادہ کرنے والا! دوسرا وہ ہے جس کے پاس دولت ہے اور اسے کسی پر بھروسہ نہیں ہے۔ تیسرا وہ ہے جس نے لوگوں کو بہت سی جھوٹی باتیں بتائیں اور لوگوں پر جھوٹے الزامات لگائے۔ چوتھا وہ ہے جس کے پاس زیادہ ذمہ داری ہے لیکن اس کے پاس دینے کے لئے کچھ نہیں ہے۔ پانچواں وہ ہے جو کسی سے محبت کرتا ہو۔

اور علیحدگی سے ڈریں۔ جب کسی شخص کے سامنے روشنی ہوتی ہے تو اس کا سایہ پیچھے آجاتا ہے ، اور جب روشنی ہوتی ہے تو اس کا سایہ آگے آجاتا ہے ، دین نور ہے اور دنیا سایہ ہے! اگر آپ مذہب کو اولین رکھیں گے تو دنیا پیچھے سے دوڑتی آئے گی ، اور اگر آپ دین کو پس پشت ڈالیں گے تو دنیا آگے چلے گی ، اور آپ پیچھے پیچھے بھاگیں گے! اللہ تعالٰی مجھے اور آپ کو دین کی فکر عطا فرمائے۔ لوگوں کو تقویٰ کے سوا کچھ اور کرنے کی تاکید نہیں کی گئی کیونکہ یہ اہل بیت کی مرضی ہے۔ حضرت علی (ع) نے امام حسن سے فرمایا: بچے کا دل خالی زمین کی طرح ہوتا ہے۔ جس کو بھی یہ سکھایا جائے گا وہ سیکھے گا ، لہذا آپ کے دل کو سخت اور بےچین ہونے سے پہلے میں نے آپ کی تربیت میں بہت محنت کی۔ امام علی علیہ السلام فرماتے ہیں: نیکی اور بھلائی کے 10 حصے ہیں ، ان میں سے 9 خدا کے ذکر کے سوا خاموش ہیں اور ایک حصہ احمقوں کی مجلس میں بیٹھنے سے گریز کرنا ہے۔ امام علی (ع) فرماتے ہیں: ایک شخص کے لئے ضروری ہے کہ وہ لوگوں کی رہنمائی کے لئے اپنے آپ کو مقرر کرے ، لوگوں کو تعلیم دینے سے پہلے اس کی تعلیم کرے ، اور رسول اللہ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے پہلے لوگوں کو خدائی آداب کے مطابق دعوت دے۔ اللہ سبحانہ وتعالی نے فرمایا: ہر شخص جو اپنے پیٹ کو بھرنے کی ہر ممکن کوشش کرتا ہے اتنا ہی اس کے قابل ہے جو اس کے پیٹ سے نکلا ہے۔ جی ہاں. حضرت علی علیہ السلام فرماتے ہیں: خبردار! علم کے بغیر علم کا کوئی فائدہ نہیں۔ جانئے کہ غور و فکر کے بغیر تلاوت کرنا فائدہ مند نہیں ہے۔

جان لو کہ سمجھے سمجھے عبادت میں کوئی بھلائی نہیں ہے۔ امام علی علیہ السلام فرماتے ہیں: جو شخص جہاد کرتا ہے اور شہادت کا پیالہ پیتا ہے اس شخص سے اونچا مقام نہیں ہوتا جو گناہ پر قدرت رکھتا ہے لیکن وہ اپنے پاؤں کو گناہ سے آلودہ نہیں کرتا ہے۔ امام علی (ع) فرماتے ہیں: توبہ کرنا ، زبان سے معافی مانگنا ، اعضاء کے فعل کے ذریعہ ، اور ایسا گناہ نہ کرنے کا پختہ ارادہ کرنا۔ امام علی علیہ السلام فرماتے ہیں: اپنے علم کو شک اور اپنے عقیدے کو شک میں مت ڈالیں۔ جب آپ کچھ جانتے ہو ، اسی کے مطابق کام کریں ، اور جب آپ یقینی کی منزل تک پہنچیں تو عمل کریں۔ اللہ ہمارا حامی و مددگار رہے۔ آمین۔

 

Check Also

صبح اٹھوں تو ایڑھی

صبح اٹھوں تو ایڑھی کے درد سے بے حال ہوجاتی ہوں خواتین میں ایڑھی کا درد کیوں عام ہے؟

آج کل کسی بھی خاتون سے پوچھیں تو ایک ہی مسئلہ نظر آتا ہے ۔۔پاؤں …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *